جب سب خدا اور دیوتا تحلیل ہو گئے…

Yasser Chattha

جب سب خدا اور دیوتا تحلیل ہو گئے…

“میں اگر ایک بہت لمبے عرصے کے trance میں چلا جاؤں، اور اپنے کیفیتی وقت کی تحلیل کر سکوں، تو دنیا کے سب مذہب اِس ایک سیکولر جذبے و احساس، پیار، کے باغ کے باہر سب انسانیت کو واحد کر دوں،” اس نے سوچا۔

ایسا ہو نہیں سکتا تھا، لیکن دنیا کے سب محبت کرنے والوں نے مل کر آہ بھری۔

سب خدا اور دیوتا تحلیل ہو گئے۔ اور ان کے رابطہ کاروں کی دُھنی ہوئی رُوئی بن گئی۔

یہ وہ اصل تھی، جسے ہر کوئی کذب بیانی سے در اصل، در اصل کہہ کہہ کر پکارتا رہا تھا۔ یہ اس کی سوچ نہیں تھی، بَل کہ وہ اسمِ اعظم تھے جو سب ہونی، اَن ہونی، اور ہونی اور اَن ہونی کی سرحدوں کے باہر تھے، ان سب پر  محیط تھے۔

اس کی سوچ وہ performative تھا، جو آج قرن ہا قرن، نہیں شاید وقت سے پَرے کا کچھ سَمے تھا۔ جس کی کوئی پیمائش نا تھی، وہ ادراک سے باہر تھا۔

آن کی آن میں… دنیا میں اس قدر غرور پگھلا، ناز بخارات میں بدلا کہ ہر سُو جَل تَھل ہو گیا۔

پُھول اُگ آئے۔

سب خدا اور دیوتا تحلیل ہو کر پھولوں اور پھل دار درختوں کے لیے کھاد بن گئے۔

دنیا ایسی سُہانی ہو گئی کہ اب کوئی قیامت کی نا بات کرتا تھا، اور نا کوئی قیامت کی آس کرتا تھا۔

اہلِ حِرص و ہَوَس نا ہوں تو دنیا کا کیا بدل ہو سکتا تھا۔

سب چرند، پرند، نباتات ایک دوسے سے کلام کرتے تھے، اور سنتے تھے، اور سمجھتے تھے۔ وہ سب ایک فہم کی ایکتا میں تو آ گئے، لیکن سب اپنی کرتے تھے۔

انسان نے فطرت کے ساتھ مل کر فرشتوں کو آخری معرکے میں مات دے دی تھی۔

اور کچھ فرشتوں نے محبت کی قسم کھا کر خود کو انسان قرار دے لیا تھا۔

واہ، کیسی کُن فیکُن ہے،

آہ، وہ کیسی کُن فیکن تھی۔

ہمیں نئی کَن فیکن کی ضرورت تھی، پوری ہو گئی۔ اب احتیاج ختم ہو چکی تھی۔

مائے نی مائے (شیو کمار بٹالوی)

مائے نی مائے!

میرے گیتاں دے نیناں وِچ

بِرہوں دی رڑک پَوّے

ادھی ادھی راتیں

اٹھ روون موئے مِتراں نوں

مائے سانوں نیند نہ پَوّے

بھیں بھیں ، سگندھیاں وچ

بَنّھاں پَھہے چاننی دے

تاں وی ساڈی پِیڑ نہ سہوے

کوسے کوسے ساہاں دی

میں کراں جے ٹکور مائے

سگوں سانوں کھان نُوں پَوّے

آپے نی میں بالڑی

میں حالے آپ مَتّاں جوگی

مت کیہڑا اَیس نوں دَوّے؟

آکھ سُو نی مائے ایہنُوں

رووے بُلھ چِتھ کے نی

جگ کِتّے سُن نہ لَوّے

آکھ سونی کھا لَئے ٹُک

ہجراں دا پکیا

لیکھاں دے نی پُٹھڑے توّے

چَٹ لئے تریل نُوں نی

غماں دے گلاب توں نی

کالجے نوں حوصلا رَہوے

کیہڑیاں سپیریاں توں

منگاں کُنج میل دی میں

میل دی کوئی کنج دَوّے

کیہڑا ایہناں دَماں دیاں

لوبھیاں دے دراں اُتے

وانگ کھڑا جوگیاں رہوے

پیڑے نی پیڑے

ایہ پیار ایسی تتلی ہے

جہڑی سدا سُول تے بَہوے

پیار ایسا بھور ہے نی

جہدے کولوں آشنا وی

لکھاں کوہاں دور ہی رہوے

پیار اوہ محل ہے نی

جہدے چ پکھیروواں دے

باجھ کجھ ہور نہ رہوے

پیار ایسا آلہنا ہے

جِہدے چ نی وَصلاں دا

رتڑا نہ پلنگ ڈہوے

آکھ مائے، ادھی ادھی راتیں

موئے متراں دے

اُچی اُچی ناں نہ لَوّے

متے ساڈے مویاں پچھوں

جگ ایہہ شریکڑا نِی

گیتاں نوں وی چندرا کہوے

مائے نی مائے

میرے گیتاں دے نیناں وچ

بِرہوں دی رَڑک پوّے

ادھی ادھی راتیں

اٹھ روون موئے مِتراں نُوں

مائے سانُوں نیند نہ پَوّے

About یاسرچٹھہ 167 Articles
اسلام آباد میں ایک کالج کے شعبۂِ انگریزی سے منسلک ہیں۔ بین الاقوامی شاعری کو اردو کےقالب میں ڈھالنے سے تھوڑا شغف ہے۔ "بائیں" اور "دائیں"، ہر دو ہاتھوں اور آنکھوں سے لکھنے اور دیکھنے کا کام لے لیتے ہیں۔ اپنے ارد گرد برپا ہونے والے تماشائے اہلِ کرم اور رُلتے ہوئے سماج و معاشرت کے مردودوں کی حالت دیکھ کر محض ہونٹ نہیں بھینچتے بَل کہ لفظوں کے ہاتھ پیٹتے ہیں۔