ناول پر کون بات کرے: ایک متبادل رائے

Rozan Social Speaks
ایک روزن سوشل

ناول پر کون بات کرے: ایک متبادل رائے

از، یاسر چٹھہ 

ڈیٹ لائن فیس بک: آرٹس کونسل کراچی میں دوپہر بارہ بجے

“جو احباب بہ نفسِ نفیس نہ آ سکیں، وہ آرٹس کونسل کی ویب سائٹ پر بہ راہِ راست دیکھیں:

artscouncil.org.pk”

یہ میسج لکھتے ہیں سید کاشف رضا جو کہ ایک پینلسٹ بھی ہیں۔ اردو ناول، ایک صدی کا قصہ نامی تقریب میں جو آرٹس کونسل کراچی کے زیر اہتمام منعقد ہونی ہے۔

13th Worl Urdu Conference
تیرھویں عالمی اردو کانفرنس 2020

اس میسیج پر لطیف طنز اور مبصرانہ ریگ مال کی خراش کا عمدہ ہنر لیے جواب آتا ہے اظہر حسین کا، نیچے رقم کرتا ہوں:

“اس موضوع پہ عمدہ تر گفتگو تصویروں میں موجود دو عدد ناول نگار ہی کر سکتے ہیں۔ [دو چمکتے دل ایموجی کے طور پر لگاتے کہتے ہیں۔]”

اظہر حسین کے جواب پر خالد فتح محمد کا بھی لطیف طنز کی کاٹ لیے اور محصور ناول نگاروں کی موجودگی کو بھانپتے اور محسوس کرتے ہوئے جواب الجواب لکھتے ہیں:

“اظہر حسین، ناول پر بات ناول نگار نہیں کر سکتے کیوں کہ وہ ناول کو سمجھتے نہیں ہیں۔ ناول کو غیر ناول نگار ہی سمجھتا ہے۔”

بیچ میں باری آتی ہے ضیغیم رضا کی۔ ضیغم اس وقت ایک بڑی یونی ورسٹی سے اردو ناول کے کسی جزو سے پی ایچ ڈی کرتے ہوئے طالبِ دانش و ہنر ہیں۔ وہ کہتے ہیں:

“پہلی دفعہ کوئی پینل نظر آیا جس میں نسبتاً پڑھنے والے لوگ ہیں!”

ضیغم رضا کی اس بات پر خالد فتح محمد تجسس، تشفی و تسکین کی نا آسودگی کا گِلہ کرتے ہوئے کہتے ہیں:

“ہمیشہ یہی پینل ہوتا ہےاور وہی باتیں (…)”

[نوٹ: راقم البتہ وقت بچا کر اس دوران کچھ پڑھ لیتا ہے… (بلند قہقہے کا ایموجی) وہ بھی بہت چالاک ہے۔ This is an aside of the scribe]

اب باری آتی ہے، اس راقم کی، یعنی راقمِ روئیداد کی۔ اظہر حسین اور خالد فتح محمد کی دست بوسی کرتے عرض کیا، پنجابی میں لکھا، دیگر احباب غصہ نہ کیجیے گا:

تھوڑی جئی گنجائش کڈھو کہ کم از کم ناول پڑھن آلے وی کج گَل کر سکدے نیں … پر پڑھدے ضرور ہون۔

آڈٹ دا بنیادی اصول ایہہ وے کہ تھرڈ پارٹی آڈٹ ہووے، پر تھرڈ پارٹی آڈٹ کرن لئی کج تے پڑھن دی کوشش کرے … [پھول کا ایموجی ساتھ لگاتے ہوئے]

خالد فتح محمد راقم کو عزت دیتے ہوئے جواب دیتے ہیں:

گنجائش ای تے ہے جے۔ ناول تے گل تے ناول نگار اقلیت وچ۔ بتھیرے لوک نے جیہڑے گل کر سکدے نیں: جیویں حفیظ خان، اآمنہ مفتی یا نجم الدین احمد تے کج ہور وی۔

[غزل گو کی غزل کے فن پر بات کرنے کی مثال، ناول نگار کی مدد کے لیے لاتے ہوئے مزید خالد فتح محمد مزید کہتے ہیں:]

کدھرے بیلنس ہونا چاہی دا اے۔ غزل تے گَل بات غزل گو نئیں کردا اوس ہماتڑ نوں غزل لکھن دا کی پتا۔

اس کے بعد یہ راقم، خالد فتح محمد کی بات کا جواب دینے کے علاوہ کچھ زاویے بڑھاتے دوبارہ عرض کرتا ہے:

اک ہون میری وی سنو، ساڈے ناول لکھن والیاں دا کُلی پینل اپنے ہم عصراں دے ناولاں تے بولن لئی غیر مناسب پینل ہووے گا… ہاں، البتہ اوہ کلاسیک یا بَہ دیسی زبان دے ناول نگاراں تے گَل کرن لئی بہت ہی عمدہ ریسوس ہو سکدے نیں… (ایہہ میرا بڑا اہم تجربہ ایہہ)

یونی ورسٹی پروفیسر عصری ادب تے گَل کرن لئی مجموعی طور تے انتہائی غیر مناسب (in any representative sample) پینلسٹ بناندے نیں کہ ایہہ بہت کم عصری تخلیقات دا مطالعہ رکھدے نیں، بَہ وجہ ایچ ای سی نظام، اور اوہدیاں مطلوبہ سِر پِیڑاں!

ایس لئی آکھناں آں، پڑھن آلی تھرڈ پارٹی … ورنہ مکالمہ نئیں ہووے گا، پرفارمنس البتہ ضرور ہو جاندی ایہہ۔ سیکھن نُوں وی کج مل جاندا ایہہ۔

پر ساڈے کول پرفارمنس دا زیادہ رواج ایہہ… [افسوس ناک قہقہہ مع ایموجی]

لکھن والے اپنے ناول دے کرافٹ تے گل کرنھ، اوہدے لکھن دے پراسیس تے گل کرنھ… سوہنی گَل کرنھ دے، اوہناں دا اپنا ورژن آوے گا،… اپنے لکھے دی تفہیم اور اوسے ٹیکسٹ دی جمالیات یا سیاسیات لئی اوہ مناسب افراد نئیں رہندے… اپنی تفہیم جدھون لکھاری خود کران لگدا اے تے اوہ اشتہاری، advertiser بن جاندا اے، ایہہ چنگا تے نئیں لگدا پر کیہ کرئیے ایتھے کیہڑی کَل سیدھی ایہہ [محبانہ قہقہے کے ایموجی کے ساتھ]

About یاسرچٹھہ 222 Articles
اسلام آباد میں ایک کالج کے شعبۂِ انگریزی سے منسلک ہیں۔ بین الاقوامی شاعری کو اردو کےقالب میں ڈھالنے سے تھوڑا شغف ہے۔ "بائیں" اور "دائیں"، ہر دو ہاتھوں اور آنکھوں سے لکھنے اور دیکھنے کا کام لے لیتے ہیں۔ اپنے ارد گرد برپا ہونے والے تماشائے اہلِ کرم اور رُلتے ہوئے سماج و معاشرت کے مردودوں کی حالت دیکھ کر محض ہونٹ نہیں بھینچتے بَل کہ لفظوں کے ہاتھ پیٹتے ہیں۔